Agha Khaniyat Ulama-e-Ummat ki Nazar me (آغا خانیت علماء امت کی نظر میں)

پاکستان میں جن افراد کو آغاخانی کہاجا تا ہے انکا ابتداءی تعلق اسماعیلی مذہب کی نزاری شاخ سے ہے۔ اسماعیلی مذہب کی ابتداء دوسری صدی ہجری کے اواخر میں ہوءی۔ اسماعیلیوں کے عقاءد پر یونانی ؛ایرانی؛مجوسی اور نصرانی فلسفوں کا شدید غلبہ نظرآتا ہے۔ ان کے یہاں تعلیمات کو دوحصوں میں منقسم کیا گیا ہے؛ظاہری اور باطنی۔اس کتاب میں آغاخانیوں کے موجودہ عقاءد کی روشنی میں دنیا بھر کے جید علماء کرام سے فتاوی حاصل کر کے کتابی شکل میں پیش کیا گیا ہے۔
The people known as Agha Khani, belong the Nazari Branch of Ismailia. It was originated in the Second Centry Hijri and their beliefs are immensely under influnce of Christianities, Jewism, Greek, Iranian philosopher and the people who worship fire. In the light of their current faiths and beliefs, Fatawas (Islamic Jurisprudence) are collected from renowned Ulamas (Scholars) of the world and gathered in this book.

ٹیگز: , , , , , , , ,


%d bloggers like this: